سائفر کیس میں چیئرمین پی ٹی آئی کی گرفتاری نہیں ہو گی، مزمل سہروردی


سینئر تجزیہ کار مزمل سہروردی نے کہا ہے کہ میرا نہیں خیال کہ سائفر کیس میں چیئرمین تحریک انصاف کی گرفتاری ہو گی ۔

ہم نیوز کے پروگرام’ ویوز میکرز ” میں مزمل سہروردی نے کہا ہے کہ چیئرمین پی ٹی آئی کی 9 مئی کے سانحہ پر گرفتاری نہیں ہوئی تو پھر سائفر پر گرفتاری کیسے ہو سکتی ہے۔

سائفر پری پلان ڈرامہ ، سیاسی مقاصد کیلئے استعمال کیا گیا ، اعظم خان

انکا کہنا تھا کہ لاہور ہائی کورٹ نے سائفر پر 4  ماہ کا اسٹے دیے رکھا کہ اس پر تحقیقات نہیں کی جا سکتیں یہ غیرمتوقع اسٹے تھا،کبھی بھی کورٹس نے انویسٹی گیشن نہیں روکی ہے۔

مزمل سہروردی نے کہا ہے کہ کورٹس کسی بھی کیس کی راہ میں رکاوٹ نہیں بنتے،بلکہ تفتیش ہونے دی جاتی ہے ، کورٹس کا کام کیس میں تفتیش کے بعد ٹرائل میں آتا ہےلیکن یہاں ہم نے دیکھا کہ ایک نوٹس آنے کے بعد چار پانچ ماہ ایف آئی اے کو کسی بھی قسم کی کاروائی سے روک دیاگیا،انہوں نے کہا کہ آپ اس کے بارے میں تحقیق اور تفتیش ہی نہیں کر سکتے، یہ اسٹے پرسوں 6 ماہ بعد ختم ہوا ہے ۔

اعظم خان بند کمرے میں موجود تھے جب سائفر پر بات ہورہی تھی، فیصل واوڈا کا دعویٰ

سینئر تجزیہ کار کا کہنا تھا کہ میرے مطابق اس وقت جوڈیشری کی جو صورتحال ہے جس طرح ہم دیکھ رہے ہیں کہ ایک ، ایک دن میں پندرہ، پندرہ،آٹھ ، آٹھ ضمانتیں ہوئی ہیں۔

انکا کہنا تھا کہ جس طرح نو مئی کے بعد آج 19 جولائی تک 9 مئی کیس کا نا تو ٹرائل شروع ہو سکا ہے اور نہ ہی منصوبہ سازوں کو گرفتار کیا جا سکا ہے،تو سائفر اس کے معاملے میں بہت ہی چھوٹی چیز ہے۔

انہوں نے کہا ہے کہ مجھے نہیں لگتا کہ چیئرمین پی ٹی آئی کی گرفتاری ہو گی بلکہ بہت آسانی سے ان کی ضمانت ہو جائے گی، توشہ خانہ کا ٹرائل ابھی شروع نہیں ہو سکا ہے روزاسٹے ہو جاتا ہے، کبھی درخواست دے دی جاتی ہے اور کبھی جج پر اعتراض اٹھا دیا جاتا ہے۔

سینئر صحافی کا مزید کہنا تھا کہ جب تک ہماری جوڈیشری کی موجودہ صورتحال برقرار ہے تب تک کوئی ٹرائل کوئی خطرہ اور کوئی سزا نہیں ہے ۔


متعلقہ خبریں