2019 پاکستان میں پن بجلی کے حوالے سے تاریخی سال ثابت


اسلام آباد: 2019 پاکستان میں پانی اور پن بجلی کے وسائل کی ترقی کے لیے تاریخی سال ثابت ہوا ہے۔

رواں سال نیشنل گرڈ کو ریکارڈ 34 ارب 67 کروڑ 80 لاکھ یونٹ پن بجلی مہیا کی گئی، جس کی مدد سے گزشتہ سال کے مقابلے میں پن بجلی کی پیداوار میں 6 ارب 32 کروڑ 10 لاکھ یونٹ اضافہ ہوا۔

تربیلا چوتھا توسیعی منصوبہ، نیلم جہلم اور گولن گول پراجیکٹ پن بجلی کی ریکارڈ پیداوار کی بنیادی وجوہات ہیں۔

سال 2019 میں 51 سال کے تعطل کے بعد مہمند ڈیم پر تعمیراتی کام کا آغاز کیا گیا۔

دیا مر بھاشا ڈیم کے لیے مشاورتی خدمات اور ڈیم پارٹ کی تعمیر کے لیے بڈز کی جانچ پڑتال مکمل کی جاچکی ہے اور اس عظیم منصوبے پر تعمیراتی کام اگلے دو ماہ میں شروع ہو جائے گا۔

رواں سال ہی وزیر اعظم نے سندھ بیراج جیسے اہم منصوبے کی منظوری بھی دی۔

خیال رہے کہ کچھ عرصہ قبل وفاقی وزیر برائے توانائی عمر ایوب نے کہا تھا کہ حکومت انرجی مکس میں 18 سے 20 ہزار میگاواٹ آبی توانائی شامل کرنے کی منصوبہ بندی کر رہی ہے، 2030 تک 70 فیصد بجلی متبادل ذرائع سے حاصل کی جائے گی۔

اسلام آباد میں ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ آبی وسائل میں سرمایہ کاری کے ذریعے مجموعی ملکی پیداوار (جی ڈی پی) میں ایک فیصد اضافہ ہوگا۔

وفاقی وزیر نے بتایا کہ تربیلا، منگلا، غازی بروتھا اور خانپورڈیم  کے علاوہ نہروں کے کنارے تیرتے شمسی پینلز (فلوٹنگ سولر پینلز) نصب کیے جائیں گے۔


متعلقہ خبریں