متوازن غذا دماغی صحت کو بڑھاتی ہے، محققین

Food

محققین کی تحقیقات کے مطابق جو لوگ متوازن غذا کا استعمال کرتے ہیں وہ بہتر ذہنی صحت اور علمی کام کاج کا مظاہرہ کرتے ہیں۔

غیر ملکی خبررساں جریدے کے مطابق ایک حالیہ تحقیق میں اس بات کا جائزہ لیا گیا کہ کس طرح مختلف غذائی پیٹرن دماغی صحت کے کئی پہلوؤں پر اثر انداز ہوتے ہیں۔ بشمول دماغی صحت، علمی فعل، میٹابولک بائیو مارکر اور دماغی ساخت جیسا کہ ایم آر آئی کے استعمال سے مانا جاتا ہے۔

یہ مطالعہ دماغی افعال اور دماغی صحت کے نتائج کو بڑھانے کے لیے دانشمندانہ غذائی انتخاب کرنے کی اہمیت کو واضح کرتا ہے۔

تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ پھل، سبزیاں، سارا اناج، دبلی پتلی پروٹین اور صحت مند چکنائی سے بھرپور غذا علمی افعال کو سہارا دیتی ہے اور علمی زوال کے خطرے کو کم کرتی ہے۔

یہ بھی پڑھیں: پاکستان میں اینٹی بائیوٹک ادویات کا غیر ضروری استعمال بڑھ گیا

اس کے برعکس، پروسیسرڈ فوڈز، سیر شدہ چکنائیوں اور شکروں والی غذائیں دماغ پر منفی اثرات مرتب کرسکتی ہیں۔ جس سے دماغی صحت اور علمی نتائج خراب ہوتے ہیں۔

اس بات سے اندازہ لگایا جاسکتا ہے کہ کوئی خوراک سبزی خور ہے یا نان ویجیٹیرین، توجہ کھائی جانے والی کھانوں کے معیار اور توازن پر ہونی چاہیے۔


ٹیگز :
متعلقہ خبریں