پنجاب: تفریحی مقامات کے ٹکٹ میں اضافہ کی تجویز مسترد

فائل فوٹو


لاہور: وزیر اعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے تفریحی مقامات کی انٹری فیس میں اضافے کی تجویز مسترد کر دی ہے۔

وزیراعلیٰ عثمان بزدار کی ہدایت پر کابینہ کی قائمہ کمیٹی برائے فنانس اینڈ ڈویلپمنٹ کا اجلاس ہوا جس میں آثار قدیمہ کے مقامات اور پارکس میں داخلہ فیس پر نظر ثانی کی تجویز کو رد کر دیا گیا۔

یہ بھی پڑھیں: عوام رہبروں کے بھیس میں رہزنوں کے چہرے پہچان چکے ہیں، عثمان بزدار

عثمان بزدار کا اس موقع پر کہنا تھا کہ یہ فیصلہ وسیع تر عوامی مفاد میں کیا گیا ہے، عوام پر کوئی بوجھ نہیں ڈالا جائے گا۔

اجلاس کے دوران کابینہ اسٹیڈنگ کمیٹی نے واسا فیصل آباد کے لیے ایک سو پچپن ملین روپے کی گرانٹ کی منظوری دے دی۔

قبل ازیں کابینہ کمیٹی برائے فنانس نے محکمہ سیاحت کی تفریحی مقامات کے ٹکٹ مہنگے کرنے کی تجاویز منظور کر لی تھیں تاہم اس کا حتمی فیصلہ پنجاب کابینہ کے اجلاس میں ہونا تھا۔

حتمی فیصلے کے بعد پارکس اور باغات کی انٹری فیس میں اضافہ متوقع تھا۔ شالامار باغ لاہور میں بڑوں کے لیے ٹکٹ بیس سے بڑھا کر پچاس روپے اور بچوں کا ٹکٹ دس سے بیس روپے کرنے کی تجویز زیرغور تھی۔

شاہدرہ کمپلیکس، مقبرہ نور جہاں، ہڑپہ، واہ گارڈن، ہرن مینار اور ٹیکسلا میوزیم سمیت دیگر مقامات کی داخلہ فیس بھی بڑھانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: سیاحت کے شعبے کا فروغ حکومت کی اولین ترجیحات میں شامل ہے، شہریار آفریدی

ہم نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے شہریوں کا کہنا تھا کہ عام آدمی سے سیر و تفریح کا حق بھی چھینا جا رہا ہے۔ بچوں کے لیے ٹکٹس کم ہونے چاہئیں۔

ہم نیوز سے بات چیت کے دوران شہریوں عرفان علی اور خالد محمود کا کہنا تھا کہ بچوں کو سیر کے لیے لے آتے تھے مگر اب یہ بھی مشکل ہوتا نظر آ رہا ہے۔


متعلقہ خبریں