پاکستان میں تیار ہونے والی تمام سگریٹس پر یکساں ٹیکس عائد کرنے کا مطالبہ

خیبرپختونخوا: ای سگریٹ اور ویپس کی خریدوفروخت پر پابندی عائد کرنے کا فیصلہ

تھنک ٹینک نے حکومت کو ڈبلیو ایچ او کی ہدایات سے انحراف کرنے پر مجبور کرنے کے خلاف خطرے کی گھنٹی بجا دی۔

اسلام آباد میں قائم تھنک ٹینک کیپٹل کالنگ نے عالمی ادارہ صحت(ڈبلیو ایچ او) اور دیگر بین الاقوامی اداروں کی جانب سے اپنے کاروبار پر بجٹ اور دیگر چیکوں کے حوالے سے طے کردہ ہدایات کی مخالفت کرنے کے لیے ملٹی نیشنل سگریٹ کمپنیوں کی مہم میں اضافے پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔

تھنک ٹینک نے کہا ہے کہ انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ (آئی ایم ایف) نے حکومت کو باقاعدہ سفارش کی ہے کہ پاکستان میں تیار ہونے والے تمام سگریٹس پر یکساں ٹیکس عائد کیا جائے۔ چاہے وہ کسی بھی مقامی یا غیر ملکی برانڈز کے ہوں۔

آئی آئی یو آئی سے تعلق رکھنے والے ڈاکٹر حسن شہزاد کا اس حوالے سے کہنا ہے کہ حقیقت میں پاکستان میں سگریٹ کی قیمتیں دیگر علاقائی ممالک کے مقابلے میں کم ہیں۔

انہوں نے کہا کہ تمباکو نوشی میں کمی اور سگریٹ کی قیمتوں میں اضافے کے درمیان براہ راست تعلق ہے۔ یہ بدقسمتی کی بات ہے کہ سگریٹ کمپنیوں کے نمائندے عوامی بحث پر حاوی ہیں اور حکومت کو ڈبلیو ایچ او کے پروٹوکول کے مطابق اس عمل کو روکنے کی ضرورت ہے جس کے لئے حکومتوں کو سگریٹ کے کاروبار کے فروغ کے بارے میں محتاط رہنے کی ضرورت ہے۔

انہوں نے تمباکو نوشی کے خلاف کام کرنے والے گروپوں پر بھی زور دیا کہ وہ حقیقی تحقیق کریں کیونکہ وہ پالیسی سازوں کے سامنے جو اعداد و شمار پیش کر رہے ہیں وہ پرانا ہے، جسے دوبارہ دریافت کرنے کی ضرورت ہے۔

ڈاکٹر شہزاد نے کہا کہ یہ وہ کمزوریاں ہیں جن سے ملٹی نیشنل کمپنیاں آسانی سے فائدہ اٹھاتے ہوئے اپنے ایجنڈے کو آگے بڑھاتی ہیں۔ یہ دیکھا گیا ہے کہ یہ کمپنیاں معاشرے میں تمباکو نوشی بڑھانے کے لئے ایک دوسرے سے مقابلہ کر رہی ہیں لیکن وہ اپنے کاروبار کو آسان بنانے کے لئے حکومت پر اثر انداز ہونے کے لئے ایک صفحے پر آتی ہیں ، جو مجموعی طور پر صحت کے لئے خطرہ ہے۔


متعلقہ خبریں