وفاقی حکومت کا آڈیو لیک پر چیف جسٹس سے ازخود نوٹس لینے کا مطالبہ


وفاقی حکومت نے سوشل میڈیا پر گردش کردی آڈیو لیک پر چیف جسٹس سے ازخود نوٹس لینے کا مطالبہ کر دیا۔

میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وزیرداخلہ رانا ثناء اللہ نے کہا کہ ایک نئی آڈیو منظرعام پر آئی ہے، پی ٹی آئی رہنماؤں کی گفتگو سے ہر پاکستانی کے ذہن میں تشویش ابھرتی ہے، کیا ملک کے فیصلے گھر والوں کے کہنے کے مطابق ہو رہے ہیں؟

انہوں نے کہا کہ گھریلو خواتین پارٹی کارکنوں کو غداری پر اکسائیں گی تو بات تو ہو گی، معزز جج صاحبان کے گھر والے اس طرح کی گفتگو میں ملوث ہیں؟

وزیر داخلہ نے کہا کہ بابا رحمت زحمت بن کر ملک پر مسلط رہے۔ انصاف کی سب سے بڑی کرسی پر بیٹھ کر اُنہوں نے جو کیا اس پر پوری دنیا میں مذاق بنا۔

ان کا کہنا تھاکہ نواز شریف کو نااہل کیا گیا۔ اب ایک اور جج بھی پی ٹی آئی کے سرگرم رکن ہیں۔ یہ چیزیں انصاف کے تقاضوں کے برعکس ہیں۔

وزیر داخلہ رانا ثنا اللہ نے کہا ہے کہ پتا چلایا جائے کہ یہ گفتگو اصلی ہے یا نقلی؟، سامنے آنے والی گفتگو کا فرانزک آڈٹ کرایا جائے، گفتگو درست ہے تو پھر اس پر پوچھ گچھ ہونی چاہیے۔


متعلقہ خبریں