کراچی: کے الیکٹرک کو تین دن کا الٹی میٹم

کراچی: کے الیکٹرک کو تین دن کا الٹی میٹم

کراچی: جماعت اسلامی نے نجلی کی تقسیم کار کمپنی کے الیکٹرک کو الٹی میٹم دیتے ہوئے کہا ہے کہ اگر آئندہ تین دنوں میں لوڈ شیڈنگ کا خاتمہ نہیں کیا گیا تو بھرپوراحتجاج کیا جائے گا۔

وزیراعظم صاحب! آئین میں گورنر راج کا آپشن کس لیے ہے؟ خالد مقبول

ہم نیوز کے مطابق الٹی میٹم امیر جماعت اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمان نے ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے کہا کہ شہر میں بجلی کی لوڈ شیڈنگ کی صورتحال بگڑتی جا رہی ہے۔ انہوں نے واضح کیا کہ ضرورت پڑنے پر آئندہ تین دن بعد احتجاج کا اعلان کریں گے۔

امیر جماعت اسلامی کراچی نے کہا کہ حکومت کی جانب سے شہریوں کو کوئی ریلیف نہیں دیا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کے الیکٹرک کی نجکاری کے16 سال بعد بجلی کی پیداوار میں صرف گیارہ فیصد اضافہ ہو سکا ہے۔

صبح 8 سے رات 8 بجے تک کارروبار کرنے کی اجازت دی جائے، سندھ تاجر

پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے حافظ نعیم الرحمان نے کہا کہ نیپرا کے الیکٹرک کو ڈھیل دیتا ہے۔ انہوں نے استفسار کیا کہ کے الیکٹرک کی نجکاری کیوں گئی تھی؟ ان کا کہنا تھا کہ اس لیے کہ لوڈ شیڈنگ ختم ہو؟ اور یہ خود انحصاری کی طرف جائیں۔

ہم نیوز کے مطابق امیر جماعت اسلامی کراچی نے کہا کہ کے الیکٹرک صارفین کی تعداد ساڑھے 29 لاکھ ہوچکی ہے جب کہ 2005 میں صارفین کی تعداد 18 صرف لاکھ تھی۔ انہوں نے کہا کہ حکومت اب ایک پرائیوٹ ادارے کو 95 ارب کی سبسڈی دیتی ہے۔

جماعت اسلامی کراچی کے امیر کا کہنا تھا کہ کے الیکٹرک کے والی وارث (ماں باپ) کا ہی نہیں پتا کہ کون اس کا مالک ہے؟ انہوں نے دریافت کیا کہ کیا ملک دشمن عناصر اس کے کرتا دھرتا ہیں؟

کے الیکٹرک کے صارفین کیلئے بجلی مزید مہنگی

حافظ نعیم الرحمان نے کہا کہ کراچی کے شہری لوڈشیڈنگ کے عذاب میں مبتلا ہیں اور وفاقی حکومت اس کی سب سے بڑی ذمہ دار ہے۔ انہوں نے کہا کہ 13 برس سے برسراقتدار پی پی اس مسئلے پر بولنے کو تیار نہیں ہے۔


متعلقہ خبریں