غزہ کی سب سے خوفناک رات، اسرائیلی بمباری سے سینکڑوں فلسطینی شہید

غزہ کی سب سے خوفناک رات، اسرائیلی بمباری سے سینکڑوں فلسطینی شہید

اسرائیل کا غزہ میں 7 اکتوبر کے بعد سے اب تک کا سب سے ہولناک حملہ، گزشتہ 24 گھنٹوں میں اسرائیلی بمباری سے 400 سے زائد فلسطینی شہید ہوگئے۔

مشرق وسطی کے خبر رساں ادارے الجزیرہ کے مطابق گزشتہ رات اسرائیل نے غزہ کے رہائشی علاقوں جبالیہ پناہ گزین کیمپ اور غزہ کے الشفا اور القدس ہسپتالوں کے قریب مقامات پر بمباری کی۔

اسرائیل کا زمینی حملہ پسپا ، حماس نے ایک ٹینک ، 2 بلڈوزر تباہ کر دیئے ، بمباری سے مزید 400 فلسطینی شہید

فلسطینی اتھارٹی کا کہنا ہے کہ 7 اکتوبر سے اب تک اسرائیل کی یہ سب سے وحشیانہ بمباری ہے۔ صہیونی ریاست نے 25 مرتبہ غزہ کے رہائشی علاقے کو نشانہ بنایا، اسرائیل نے شہریوں کے گھروں کو بغیر کسی وارننگ کے نشانہ بنایا۔

فلسطینی حکام کے مطابق اسرائیل کی وحشیانہ بمباری کا نشانے بننے والے علاقوں میں 20 لاکھ سے زائد فلسطینی آباد ہیں۔ اقوام متحدہ کے ادارے کا کہنا ہے کہ ہسپتالوں میں ایندھن ختم ہونے والا جس کے باعث 130 شیر خوار بچوں کی زندگی خطرے میں پڑ جائیگی جو مختلف اسپتالوں کے انکیوبیٹرز میں موجود ہیں۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق  اسرائیلی طیاروں نے مغربی کنارے میں مسجد اور مہاجر کیمپ کو بھی نشانہ بنایا ہے۔ یہودی آبادکار اسرائیلی افواج کیساتھ مل کر حملے کر رہے ہیں جبکہ جنازوں کے اجتماعات کو بھی نشانہ بنایا جارہا ہے۔

اسرائیل ، حماس کشیدگی ، چین نے مشرق وسطیٰ میں 6 بحری جنگی جہاز تعینات کر دیئے

دوسری طرف چین نے غزہ میں جنگ بندی کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ تشدد کے خاتمے کیلئے ہر ممکن اقدامات کرے گا۔

خیال رہے کہ غزہ پر اسرائیلی حملوں میں اب تک کم از کم 4 ہزار 651 فلسطینی شہید ہو چکے ہیں جبکہ 7 اکتوبر سے اب تک اسرائیل میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد 1400 سے زائد ہے۔


متعلقہ خبریں