نیب نے 20 سال بعد چوہدری برادران کیخلاف انکوائریز بند کر دیں

نیب نے 20 سال بعد چوہدری برادران کیخلاف انکوائریز بند کر دیں

فائل فوٹو


لاہور:  قومی احتساب بیورو (نیب) نے 20 سال بعد چوہدری برادران کے خلاف انکوائریز بند کر دیں۔

لاہور ہائی کورٹ میں چیئرمین نیب کے اختیارات کے خلاف چوہدری برادران کی درخواست پر دو رکنی بینچ نے سماعت کی۔ قومی احتساب بیورو نے چوہدری برادران کو کلین چٹ دے دی۔

نیب کی جانب سے ق لیگی رہنماؤں کے خلاف اثاثہ جات کیس میں غیر قانونی بھرتیوں اور بینک نادہندگی سمیت تمام انکوائریز بند کر دی گئیں۔

ڈی جی نیب سلیم شہزاد عدالت میں پیش ہوئے اور عدالت کو آگاہ کیا کہ چوہدری شجاعت اور پرویز الہی کے خلاف انکوائریز بند کر دی گئی ہیں جس کے بعد عدالت نے درخواستیں غیر مؤثر ہونے پر نمٹا دیں۔

مسلم لیگ ق کے رہنماؤں کی جانب سے درخواست میں مؤقف اختیار کیا گیا تھا کہ چیئرمین نیب نے 20 سال پرانے معاملے کی دوبارہ تحقیقات کا حکم دیا جبکہ پہلے انکوائری میں کچھ ثابت نہیں ہوا۔ سیاسی طور انتقام کا نشانہ بنایا جاتا رہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: پی ٹی آئی فارن فنڈنگ کیس:الیکشن کمیشن نے فیصلے میں تاخیرکی وجوہات بتا دیں

سماعت کے بعد ڈیپٹی پراسکیوٹر جنرل چوہدری خلیق الزمان نے بتایا کہ عدم شواہد کی بناء ہر انکوائری بند کی گئی ہے۔

واضح رہے کہ چوہدری پرویز الہی کے خلاف بطور وزیر بلدیات کرپشن، غیر قانونی بھرتیوں، بینک نادہندگی اور آمدن سے زائد اثاثہ جات کی انکوائریاں زیر التوا تھیں جو اب بند کر دی گئی ہیں۔


متعلقہ خبریں