شاہد خاقان عباسی کا وزیر پٹرولیم کو مناظرے کا چیلنج


اسلام آباد: سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ ہم گالی گلوچ اور دھمکی نہیں بلکہ تعمیری اپوزیشن پریقین رکھتے ہیں۔

ہم نیوز کے پروگرام ’پاکستان ٹونائٹ‘ میں میزبان ثمرعباس سے بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ تحریک انصاف کو کسی اپوزیشن کی ضرورت نہیں ہے، یہ لوگ خود تباہ ہو جائیں گے۔ کوئی بھی حکومت شروع میں ہی ضمنی انتخابات نہیں ہارتی۔

سابق وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ عمران خان اپنے دائیں بائیں دیکھیں کہ کتنے چور اور ڈاکو ان کے ساتھ بیٹھے ہیں۔ وزیر پٹرولیم کو جھوٹے الزامات لگانے پر معافی مانگنی چاہیئے، میں وزیر پٹرولیم کوٹیم سمیت مناظرہ کا چیلنج دیتا ہوں۔

انہوں نے کہا کہ حکومت ہم سے کم قیمت پر ایل این جی معاہدہ کر کے دکھائے، اگر ایسا ہو گیا تو میں گرفتار ہونے کے لیے تیار ہوں۔

تحریک انصاف کی حکومت پر کڑی تنقید کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ حکومت کے رویوں اور پالیسوں سے حالات بہتر ہوتے نظر نہیں آ رہے اسی وجہ سے حکومت عوامی اعتماد کھو چکی ہے۔ اب عوام دھاندلی زدہ حکومت کی اصلیت پہچان چکے ہیں۔

شاہد خاقان عباسی کا کہنا تھا کہ حکومت کا کام الزامات لگانا نہیں بلکہ مسائل کا حل تلاش کرنا ہے، اس حکومت کو بھی الزامات کی سیاست سے باہر آ جانا چاہیئے۔

نیب کے حوالے سے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ نیب قانون ایک آمر کا بنایا ہوا کالا اور اندھا قانون ہے۔ ہم کوئی ڈیل نہیں کر رہے، نواز شریف اپنے مؤقف پرقائم ہیں۔ ان کا بیانیہ آئین کی بالادستی اور الیکشن کی شفافیت ہے۔

سینئر صوبائی وزیر پنجاب عبد العلیم خان نے کہا کہ اپوزیشن نے جو طریقہ کار اپنایا وہ غلط ہے۔ احتجاج اپوزیشن کا حق ہے لیکن اس میں توڑ پھوڑ کرنا اور لوگوں پر تشدد کرنا ٹھیک نہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ اسپیکر نے جو کیا وہ ٹھیک تھا کیونکہ ایوان کا تقدس برقرار رکھنا ان کی ذمہ داری ہے۔

عبدالعلیم خان کا کہنا تھا کہ وہ پنجاب اسمبلی میں ہنگامہ آرائی پر تحقیقاتی کمیٹی بنانے کے لیے تیار ہیں، اگر پی ٹی آئی ارکان پنجاب اسمبلی کی ہنگامہ آرائی میں ملوث نکلے تو ان کے خلاف بھی کارروائی کی جائے گی۔

علیم خان نے کہا کہ ان پر قبضہ گروپ کے الزامات لگائے جاتے ہیں لیکن ثبوت کسی کے پاس نہیں، وہ جھوٹے الزامات کے خلاف ہتک عزت کا دعوی دائر کریں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ اگر نیب میرے خلاف کوئی ریفرنس دائر کرتا ہے تو میں اپنا عہدہ چھوڑنے کے لیے تیار ہوں۔ شریف فیملی کےخلاف تمام مقدمات ان کے ہی دور میں شروع ہوئے تھے، تحریک انصاف کا ان مقدمات سے کوئی تعلق نہیں۔

انہوں نے بتایا کہ پنجاب میں ہر وزیر اپنے آئینی اختیارات میں رہ کر کام کر رہا ہے، بلدیاتی نظام کے سلسلے میں ہم کوئی غیر قانونی قدم نہیں اٹھائیں گے اور بلدیاتی نظام کے اختیارات کو نچلی سطح تک پہنچائیں گے۔

ضمنی انتخابات کے حوالے سے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ضمنی انتخابات سے قبل حکومت کو کچھ مشکل فیصلے کرنے پڑے جن کے باعث انتخابات میں شکست کا سامنا کرنا پڑا۔

پی ٹی آئی رہنما کا کہنا تھا کہ میڈیا کے چند ادارے ان کے خلاف جھوٹی خبریں پھیلا رہے ہیں۔


متعلقہ خبریں