ایف بی آر نے منی لانڈرنگ میں ملوث کارٹیل کا سراغ لگا لیا

fbr

اسلام آباد(شہزاد پراچہ)فیڈرل بورڈ آف ریونیو نے جعلی کمپنیوں کے ایک کارٹیل کا پتہ لگایا ہے جو نہ صرف مبینہ طور پر جعلی منافع کے لیے کسٹمز کے طریقہ کار میں ہیرا پھیری بلکہ قومی خزانے کو نقصان پہنچانے اور تجارت کے ذریعہ منی لانڈرنگ میں ملوث ہے۔

نادرا ، 2023 میں ایک کروڑ 79 لاکھ بچوں کی پیدائش کا اندراج

دستاویزات میں بتایا گیا ہے کہ ڈائریکٹوریٹ آف پوسٹ کلیئرنس آڈٹ (ساؤتھ) کراچی نے حمزہ انٹرپرائزز کے خلاف متعدد الزامات بشمول مینوفیکچرنگ اسٹیٹس کا غلط استعمال کرکے ڈیوٹی/ٹیکس کی چوری اور اوپن اکاؤنٹس کے غیر قانونی استعمال کے ذریعے سولر پینل کی درآمد کے تحت ایف آئی ار درج کی ہے۔

نوسرباز سرگر م،لین دین کرنیوالا خود ذمہ دار ہوگا،اخوت فائونڈیشن

تفصیلات کے مطابق ڈائریکٹوریٹ آف پوسٹ کلیئرنس آڈٹ (ساؤتھ) کراچی نے جعلی اداروں کے ایک کارٹل کا پتہ لگایا ہے جو حمزہ انٹرپرائزز کے NTN پر متعدد کاروباری کمپنیوں کو شامل کرکے سولر پینلز کو غیر قانونی طریقے سے درآمد کرنے میں ملوث ہیں۔

دستاویزات میں بتایا گیا ہے کہ درآمد کنندہ نے ایف بی آر میں بطور ڈسٹری بیوٹر رجسٹرڈ ہوتے ہوئے غیر قانونی طور پر مینوفیکچرنگ سٹیٹس پر استثنیٰ کا دعویٰ کر کے 22.4 ملین روپے ڈیوٹی/ٹیکس کی چوری کی ہے۔

چودھری پرویز الہٰی دوبارہ اڈیالہ جیل منتقل

اس طرح امپورٹ کلیئرنس کی جانچ پڑتال سے مزید یہ بات سامنے آئی کہ سولر پینلز کے 6 جی ڈیز کو غیر قانونی طور پر کھلے اکاؤنٹ کی بنیاد پر جھوٹے/جعلی ایف آئی پر کلیئر کیا گیا اس طرح مالی فراڈ، غیر قانونی مالی بہاؤ اور ٹی بی ایم ایل شامل ہیں۔

انتخابات میں 8 کا عدد بہت ہی خطرناک ہے، لالہ رخ

دستاویزات سے پتہ چلتا ہے کہ درآمد کنندہ نے حمزہ انٹرپرائزز کے NTN پر کنٹینرز کی درآمد کے لیے دھوکہ دہی کا طریقہ اختیار کیا۔ اس کے علاوہ، درآمد کنندہ نے تمام کاروباری ناموں کے خلاف ایک غلط IBAN نمبر بھی استعمال کیا اس طرح WeBOC سسٹم/گرین چینل کا غلط استعمال کیا جو کاروبار کے نام کے ساتھ IBAN نمبر کو کراس نہیں کرتا اور صرف NTN کے ساتھ کراس میچ کرتا ہے۔

دستاویز میں یہ بھی بتایا گیا کہ مذکورہ فرضی اداروں کے کارٹیل نے کسٹم حکام کو دھوکہ دینے کے مقصد سے سنگین بددیانتی اور بے ضابطگیوں میں ملوث ہوتے ہوئے 16.75 ارب روپے کی درآمدی ترسیلات بیرون ملک منتقل کیں۔

9مئی کے واقعات ،زرتاج گل نے بھی معافی مانگ لی

مندرجہ بالا کے پیش نظر، یہ بات بالکل عیاں ہے کہ ملزم درآمد کنندہ کسٹم حکام کو دھوکہ دینے کے مقصد سے سنگین بددیانتی اور بے قاعدگیوں میں ملوث ایک جعلی ادارے کے طور پر کام کر رہا ہے۔

درآمد کنندہ نے گرین چینل کے غلط استعمال سمیت سنگین خلاف ورزیاں کی ہیں۔

جسمانی عدم موجودگی، غیر قانونی طور پر سولر پینلز کو صاف کرنے کے لیے NTN پر مختلف کاروباری ناموں کا دھوکہ دہی سے اضافہ، جرم کو چھپانے کے لیے سولر پینلز کی غیر قانونی کلیئرنس کے بعد NTN سے کاروباری ناموں کا ڈیلیشن، جھوٹے/جعلی مالیاتی انسٹرومنٹ پر سولر پینلز کی دھوکہ دہی سے کلیئرنس۔

سپریم کورٹ بلے کا نشان بحال نہیں کرتی توامید وار آزاد حیثیت سے الیکشن میں جائیں گے، بیرسٹر گوہر

اوپن اکاؤنٹ کا غیر قانونی استعمال، ٹی بی ایم ایل کی مالیاتی مالیت سے مطابقت نہ رکھنے والی درآمدات کی مالی اعانت کے لیے غیر قانونی فنڈز کا استعمال، ڈیوٹی/ٹیکس سے بچنے کے لیے مینوفیکچرنگ اسٹیٹس کا غلط استعمال، ریکارڈ کی عدم تیاری کے ذریعے آڈٹ میں رکاوٹ اور سچائی کو ثابت نہ کر کے سمن نوٹس کی خلاف ورزی کی ۔

اس طرح ملکیت کسٹمز ایکٹ اور انکم ٹیکس آرڈیننس 2001 کی دفعات کی خلاف ورزی کرتی ہے۔


متعلقہ خبریں