العزیزیہ اور ایون فیلڈ ریفرنس: نوازشریف کی اپیلوں پر تحریری حکم نامہ جاری


اسلام آباد: اسلام آباد ہائی کورٹ نے العزیزیہ اور ایون فیلڈ ریفرنس میں سابق وزیراعظم نوازشریف کی اپیلوں پر گزشتہ سماعت کا تحریری حکم نامہ جاری کردیا۔

عدالتی حکمنامے کے مطابق اسلام آباد ہائی کورٹ نے نواز شریف کو اشتہاری قرار دینے کی کارروائی کا آغاز کردیا ہے۔ عدالت نےفیصلے میں کہاکہ دفتر خارجہ کے ڈائریکٹر محمد مبشر خان، قونصل اتاشی عبدالحنان کا بیان اشتہاری قرار دینے کی کارروائی کا حصہ ہوگا۔

عدالتی حکمنامے کے مطابق پاکستانی ہائی کمیشن لندن کو ویڈیو لنک کے زریعے بیان ریکارڈ کرنے کے لیے اس آرڈر سے آگاہ کیا جائے۔ ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایا کہ نواز شریف کے وارنٹس کی تعمیل کی کوشش کی  لیکنکامیابی نہیں ہوئی۔ وارنٹس کی تعمیل کے لیے جانے والے افسران کے بیانات سات اکتوبر کو ریکارڈ ہوں گے۔

خیال رہے کہ گزشتہ ہفتے سماعت کے دوران اسلام آباد ہائی کورٹ نے کہا تھا کہ کہ نواز شریف پورے سسٹم کو شکست دے کر باہر گیا، ملزم باہر بیٹھ کر حکومت اور اس ملک پر ہنستا ہو گا، یہ انتہائی شرم ناک رویہ ہے۔

اسلام آباد ہائیکورٹ کے جسٹس عامر فاروق اور جسٹس محسن اختر کیانی نے نواز شریف کی اپیلوں پر سماعت کے دوران نواز شریف کے وارنٹ گرفتاری کی تعمیل نہ ہونے پر اسلام آباد ہائی کورٹ نے برہمی کا اظہار کیا تھا۔

جسٹس محسن اختر کیانی نے کہا  آئندہ وفاقی حکومت کو بھی خیال رکھنا چاہیے کہ کیسے کسی کو باہر جانے دینا ہے، اسلام آباد ہائیکورٹ نے نواز شریف کو اشتہاری قرار دینے کی کارروائی شروع کر دی، ضمانت منسوخی سے متعلق درخواست سماعت کیلئے منظور کر لی گئی۔

عدالت کی طرف سے نواز شریف کے وارنٹ گرفتاری کی تعمیل سے متعلق استفسار پر ایڈیشنل اٹارنی جنرل طارق کھوکھر نے بتایا تھا کہ نواز شریف کی رہائشگاہ ایون فیلڈ اپارٹمنٹس پر عدالتی وارنٹ موصول کرنے سے انکار کر دیا گیا ہے۔

عدالت نے ریمارکس دیے کہ دیکھنا ہے کیا جان بوجھ کرعدالتی کارروائی سے فرار اختیار کیا جا رہا ہے؟ جسٹس عامر فاروق کیانی نے کہا کہ نواز شریف کو پتا ہے وہ پورے نظام کو شکست دے کر گیا، ملزم لندن بیٹھ کر حکومت اور عوام پر ہنستا ہو گا کہ پورا سسٹم کچھ نہیں کر پا رہا، سفارتخانے ، ادارے اور سارا سسٹم لگا ہوا ہے۔ یہ نہایت شرمندگی کا مقام ہے۔

مزید پڑھیں: شہباز شریف نے مشکلات کے باوجود پیغام دیا کہ قائد نواز شریف ہیں، مریم نواز

عدالت نے مزید کہا تھا کہ کیا ہم لکھ سکتے ہیں ملزم نواز شریف کہیں روپوش ہوا ہے؟ نواز شریف تو پوری قوم سے خطاب کر رہا ہے، ملزم کل یہ موقف اختیار نہیں کر سکتا کہ مجھے موقع نہیں دیا گیا یا وارنٹ گرفتاری کا علم نہیں۔ آئندہ وفاقی حکومت سوچ سمجھ کر ایسے ملزم کیلئے لائحہ عمل بنائے۔

اسلام آباد ہائیکورٹ نے برطانیہ میں قونصل اتاشی کا ویڈیو لنک پر بیان ریکارڈ کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔ عدالت نے نواز شریف کو ایون فیلڈ ریفرنس میں سزا معطلی ختم کرنے کی درخواست پر بھی نوٹس جاری کیا ہے۔ عدالت نے ہدایت کی کہ قونصل اتاشی کا بیان ریکارڈ کر کے آگے بڑھیں گے۔

نیب پراسیکیوٹر نے کہا تھا کہ ملزم خود کو جان بوجھ کر چھپا رہا ہے۔ جسٹس عامر فاروق نے کہا کہ ملزم پوری قوم سے خطاب کر رہا ہوتا ہے۔

نیب پراسیکیوٹر کا کہنا تھا کہ ویڈیو اسکینڈل میں نوازشریف کی اضافی دستاویزات کی درخواست بھی آج لگی ہے۔ہماری استدعا ہے کہ نوازشریف کی اس متفرق درخواست کو بھی خارج کیا جائے۔

اسلام آباد ہائیکورٹ نے نواز شریف کو اشتہاری قرار دینے کی کارروائی شروع کرتے ہوئے ضمانت منسوخی سے متعلق درخواست سماعت کیلئے منظور کر لی۔ نیب اور وفا قی حکومت کو نوٹس جاری کرتے ہوئے سماعت 7 اکتوبر تک ملتوی کر دی۔

 


متعلقہ خبریں