عمران خان غیر روایتی وزیر اعظم بنیں، چوہدری نثارکا مشورہ


راوت: سابق وزیرداخلہ چوہدری نثار نے وزیراعظم کو مشورہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ وہ سیاسی اختلافات ختم کرکے قوم کو اکٹھا کریں۔

راوت میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ حکومت پانچ سال پورا کرے گی یا نہیں غیب کا علم شیخ رشید کو ہے، ان سے میری طرف سے بھی یہ بات پوچھیں۔

چوہدری نثار کا کہنا ہے کہ نیب ایک آزاد ادارہ ہے ، حکومت اگر اسے آزاد رہنے دیتی تو بہتر ہوتا۔

انہوں نے کہا کہ بلا تفریق احتساب سے کسی کوئی اختلاف نہیں ہے، حکومتی روئیے کی وجہ سے نیب متنازعہ ہوئی ہے، نیب کو سیاست کی بھینٹ چڑھا دیا گیا ہے۔

سابق وزیرداخلہ کا کہنا تھا کہ حکومت کسی کی گرفتاری پر ڈھول بجانا بند کرے، حکومت اپوزیشن کے تمام لیڈروں کو چوراورڈاکو کہتی ہے۔

چوہدری نثار نے کہا کہ امپائر کی انگلی کو نہیں مانتا۔

ان کا کہنا تھا کہ حکومت نے پہلے سہانے خواب کیوں دکھائے۔ اب تحریک انصاف سے کہوں گا  کہ جو تنقید نواز شریف کے حوالے سے کرتے تھے وہ جہانگیر ترین کے بارے میں کیوں یاد نہیں  آتی

چوہدری نثارنے کہا کہ یہ حکومت الیکشن کرانے والی نہیں ہے۔ میں نے اقتدار لینے سے انکارکیا جس کی وجہ سے میرے ساتھ یہ ہوا ہے۔

سابق وزیرداخلہ نے کہا کہ میں کوئی ایسا کوئی کام نہیں کرتا جومیرے ضمیر پر بوجھ ہو، ووٹ دینے والے اطمینان رکھیں ان کے ساتھ دونمبری نہیں ہوگی۔

چوہدری نثار نے کہا کہ کبھی صوبائی اسمبلی کے لیے ووٹ نہیں مانگا، اس بار بھی لوگوں نے ووٹ دئیے لیکن کیا ہوا، اس کی کبھی وضاحت کروں گا۔

ان کا کہنا تھا کہ نوازشریف کو مشورہ دیا لیکن انہوں نے نہیں مانا، اس کے بعد مجھے ٹکٹ نہیں دیا گیا، مخالف جماعت سے عہدوں کی پیشکش ہوئی لیکن میں نے یہ کام نہیں کیا۔

انہوں نے کہا کہ اپنے علاقے کے لوگوں کے بغیرکہے کام کیے، ان کے فون اور خطوں پر کام ہوئے۔ میرے مخالفین سے بھی پوچھیں کہ انہوں نے اپنے حلقے میں کیا کام کیا ہے۔ علاقے کو بجلی دی، سڑکیں بنوائیں اور پھر ان کی مرمت بھی ہوتی رہی۔

چوہدری نثارنے کہا کہ مجھ سے پارٹی بدلنے کا گلہ نہیں ہے، خدمت نہ کرنے کا نہیں ہے بلکہ اس بات کا شکوہ کیا جاتا ہے کہ علاقے میں فاتحہ خوانی کے لیے کبھی نہیں آیا۔ میرا ماننا ہے ہے کہ یہ دعا کا کام ہے سیاست کا نہیں۔


متعلقہ خبریں