ویلز: سیاستدانوں کے جھوٹ بولنے پر پابندی لگانے کا فیصلہ


برطانوی ملک ویلز کی حکومت نے سیاست دانوں پر جھوٹ بولنے پر پابندی لگانے کا فیصلہ کرلیا۔

ویلز حکومت نے 2026 کے انتخابات سے قبل ایک قانون متعارف کروانے کا اعادہ کیا ہے جس کے تحت جان بوجھ کر گمراہ کن بیانات دینے پر اراکین پارلیمنٹ کو معطل کیا جا سکتا ہے۔

ویلز حکومت کے قونصل جنرل مِک انتونیو نے کہا کہ وہ اس اصول پر ’پابند‘ ہیں۔

انہوں نے منگل کی شام سنیڈ (پارلیمنٹ) کو بتایا کہ اس قانون کے تحت اگر کوئی سیاستدان گمراہ کن بیانات کا مرتکب پایا گیا تو اسکی ایوان کی رکنیت معطل کردی جائے گی۔

ویلز 64 سال بعد فٹبال ورلڈ کپ میں پہنچ گیا

ان کا کہنا تھا کہ ویلز حکومت اور پارلیمنٹ میں موجود ہم سب اس (قانون سازی) کےلیے پُرعزم ہیں۔

پلیڈ کمری کے رہنما ایڈم پرائس نے اس سے قبل مذکورہ قانون سازی کےلیے ہی اپنا تجویز کردہ ورژن پیش کیا تھا، تاہم لیبر پارٹی کی حکومت نے کہا ہے کہ وہ اگلے سنیڈ (پارلیمنٹ) انتخابات تک قانون متعارف کروائے گی۔


متعلقہ خبریں