سینیٹ، توشہ خانہ ترمیمی بل پیش، تحفہ جمع نہ کرنے پر قیمت کا 5 گنا جرمانے کی تجویز

توشہ خانہ

اسلام آباد: سینیٹ میں توشہ خانہ منیجمنٹ اینڈ ریگویلیشن ترمیمی بل 2023 کیا گیا ہے جس میں تجویز دی گئی ہے کہ مقررہ مدت تک تحفہ جمع نہ کرنے پر قیمت کا پانچ گنا جرمانہ عائد کیا جائے گا۔

چیئرمین پی ٹی آئی کیخلاف توشہ خانہ انکوائری انویسٹی گیشن میں تبدیل

وفاقی وزیر پارلیمانی امور مرتضی جاوید عباسی نے توشہ خانہ منیجمنٹ اینڈ ریگویلیشن ترمیمی بل 2023 سینیٹ میں پیش کیا۔

انہوں نے کہا کہ اس بل کا جائزہ لیا گیا ہے، کہا گیا کہ یہ بل کافی عرصے سے ایجنڈے پر نہیں آ رہا، بل کے حوالے سے ان کی جو بھی رائے ہے وہ حکومت کے بل میں موجود ہے لیکن پھر بھی اگر یہ چاہتے ہیں تو دیکھ لیں۔

چیئرمین سینیٹ نے توشہ خانہ منیجمنٹ اینڈ ریگویلیشن ترمیمی بل 2023 متعلقہ کمیٹی کو بھیج دیا۔

واضح رہے کہ توشہ خانہ، کابینہ ڈویژن کے انتظامی کنٹرول کے تحت 1974 میں قائم کیا گیا محکمہ ہے جو حکمرانوں، اراکین پارلیمنٹ، بیوروکریٹس کو دیگر ممالک کی حکومتوں اور ریاستوں کے سربراہان اور غیر ملکی مہمانوں کی جانب سے دیے گئے قیمتی تحائف کو اپنی تحویل میں رکھتا ہے۔

توشہ خانہ قوانین کے مطابق تحائف اوراس طرح کی موصول ہونے والی دیگر اشیا کو کابینہ ڈویژن میں رپورٹ کیا جائے گا۔

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے مرتضیٰ جاوید عباسی نے توشہ خانہ میں تحائف جمع کرانے سے متعلق بل پیش کیا اور تین صفحات پر مشتمل ترمیمی بل میں کہا گیا ہے کہ کسی سرکاری عہدیدار یا سرکاری یا سرکاری وفد میں شامل مقامی نجی رکن یا غیرملکی شخصیت یا ادارہ کو دیے گئے خراب نہ ہونے والے تحائف توشہ خانہ میں جمع ہوں گے، سوائے بنیادی اسکیل ون سے 14 تک کے افسران کو ٹپ کے طور پر ملنے والے نقد تحفے کے۔

اسحاق ڈار نگران وزیراعظم بنے تو انتخابات دو سال تک نہیں ہوں گے، راجہ ریاض

بل کا اطلاق صدر، وزیراعظم، گورنرز، چیئرمین اور ڈپٹی چیئرمین سینیٹ، قومی اسمبلی کے اسپیکر اور ڈپٹی اسپیکر، وفاقی اور صوبائی وزرا، وزرائے مملکت، وزرائے اعلیٰ، سیاسی سیکریٹریز، وزیراعظم کے معاونین اور مشیران، مسلح افواج اور عدلیہ کے عہدیداران اور دیگر پر ہوگا۔ اس بل کا اطلاق سرکاری عہدہ رکھنے والے افراد کے شریک حیات اور بچوں پر بھی ہوگا۔

ترمیمی بل کے سیکشن 3 میں کہا گیا ہے کہ سرکاری عہدہ رکھنے والے یا سرکاری وفد کا حصہ نجی شخص کو ملنے والا تحفہ حکومت پاکستان کے توشہ خانہ میں مقررہ مدت کے اندر جمع کرادیا جائے گا، جس کے لیے قانون میں رولز طے کیے گئے ہیں

بل میں واضح کیا گیا ہے کہ جو کوئی اس کی خلاف ورزی کرتا ہے یا خلاف ورزی کی کوشش کرتا ہے یا سیکشن 3 یا قواعد کے برخلاف چلتا ہے، اس کو تحفے کی طے کی گئی مارکیٹ کی قیمت کا 5 گنا جرمانہ ہوگا۔ اس ایکٹ کے امور کے لیے مختص ڈویژن توشہ خانہ کے انتظام اور قانون کا ذمہ دار ہوگا اور طے شدہ انداز میں اقدامات کرے گا۔

سینیٹ میں پیش کیے گئے بل میں بتایا گیا کہ اس وقت نافذ کسی قانون میں موجود کسی بھی چیز کے باوجود حدود اور پابندیاں اسی طرح ہوسکتی ہیں جیسا کہ بیان کیا گیا ہے اور توشہ خانہ سے متعلق معلومات اس طرح کی صورتحال میں تحقیقات کے لیے دستیاب ہوں گی۔

اسلام آباد، ملازمہ پر تشدد، مقدمہ درج، جج کا بچی کی والدہ کو صلح اور رقم کی پیشکش

چیئرمین سینیٹ نے بل کمیٹی کو بھیج دیا جہاں منظوری کی صورت میں دوبارہ ایوان بالا میں پیش کیا جائے گا۔


متعلقہ خبریں