کراچی: ہیپناٹائز کرکے خواتین کو زیادتی کا نشانہ بنانے والے ملزم کی تلاش

کراچی: ہیپناٹائز کرکے خواتین کو زیادتی کا نشانہ بنانے والے ملزم کی تلاش

کراچی: شہر قائد ایک ایسا ملزم سامنے آیا ہے جو خواتین کو ہیپناٹائز کرکے زیادتی کا نشانہ بناتا ہے۔ پولیس اس کی تلاش میں سرگرداں ہے لیکن تاحال اسے کامیابی نہیں ملی ہے۔

کامونکی: رکشہ ڈرائیور نے نرسری جماعت کی طالبہ کو زیادتی کا نشانہ بنا دیا

ہم نیوز کے مطابق کراچی کے علاقے سچل میں واقع شمائل ویو اپارٹمنٹس کی رہائشی دو خواتین نے علاقہ پولیس کو رپورٹ درج کرائی ہے کہ ایک ملزم نے ہیپناٹائز کرکے انہیں زیادتی کا نشانہ بنایا ہے۔

سچل پولیس نے متاثرہ خواتین کی جانب سے درج کرائی جانے والی رپورٹ کی بنیاد پر خالد عرف پپو نامی ملزم کی تلاش میں فلیٹ پر چھاپہ مارا لیکن اسے کامیابی نہیں ملی۔

ذمہ دار ذرائع کے مطابق پولیس نے خواتین کو میڈیکل رپورٹ کے لیے اسپتال روانہ کردیا ہے اور درج کرائی جانے والی رپورٹ کی مختلف پہلوؤں سے بھی چھان بین کررہی ہے۔

ہم نیوز کو اس ضمن میں ذمہ دار ذرائع نے بتایا ہے کہ خالد عرف پپو نامی ملزم بس کنڈیکٹر ہے اور کرائے کے فلیٹ میں رہتا ہے۔

لڑکی سے زیادتی کے الزام میں جج کیخلاف مقدمہ درج

ذرائع کے مطابق پولیس نے درج مقدمہ میں زیادتی کی دفعہ کے علاوہ حبس بے جا میں رکھنے اور تشدد کا نشانہ بنانے کی بھی دفعات شامل کی ہیں۔

ماہرین کے مطابق ہیپناٹائز کی قدرت رکھنے والے افراد کی تعداد دنیا میں نہایت کم ہے کیونکہ اس علم کے حصول میں جو محنت شاقہ درکار ہوتی ہے وہ عام افراد کے بس کی بات نہیں ہے۔

عام طور پر خیال کیا جاتا ہے کہ ہیپناٹائز پہ قدرت رکھنے والا اپنے سامنے موجود شخص کے ذہن پہ قابو پالیتا ہے اور پھر اسے اپنی مرضی کے تابع کرکے اپنی جانب سے دیے جانے والے احکامات پہ عمل درآمد کراتا ہے۔


متعلقہ خبریں