افغان طالبان کا امریکہ سے مذاکرات کے لیے 14 رکنی ٹیم کا اعلان

February 12, 2019

فوٹو: فائل

کابل: افغان طالبان نے امریکہ سے مذاکرات کے لیے 14 رکنی ٹیم کا اعلان کر دیا۔

انٹرنیشنل میڈیا میں جاری ہونے والے افغان طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد کے مطابق طالبان کی مذاکراتی ٹیم میں مولوی ضیاء الرحمان، مولوی عبد السلام حنفی، شیخ شہاب الدین و دیگر شامل ہوں گے جب کہ شیر محمد عباس کو مذاکراتی ٹیم کا سربراہ مقرر کیا گیا ہے۔

ترجمان افغان طالبان کے مطابق ملا برادر نے امیر ہیبت اللہ آخونزادہ کی مشاورت سے ٹیم بنائی ہے اور امریکہ سے مذاکرات کا سلسلہ جاری رہے گا۔

ذبیح اللہ مجاہد نے کہا کہ امریکہ کے ساتھ مذاکرات درست سمت میں جا رہے ہیں اور 25 فروری کو قطر میں امن مذاکرات شروع ہوں گے۔

افغان طالبان کی چودہ رکنی ٹیم میں وفد کے سربراہ شیر محمد عباس، مولوی ضیا الرحمان مدنی، مولوی عبدالسلام حنفی، شیخ شہاب الدین دلاور، ملا عبدالطیف منصور، ملا عبدالمنان قمری، مولوی عامر خان، ملا محمد فضل مظلوم، ملا خیر اللہ، مولوی مطیع اللہ، ملا محمد انس حقانی، ملا نور اللہ نوری، مولوی محمد نبی عمری اور ملا عبدالحق واسق شامل ہیں۔

پاکستان کے وزیراعظم عمران خان نے بھی گذشتہ روز سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر کہا تھا کہ پاکستان نے ابو ظہبی میں افغان طالبان اور امریکی حکام کے درمیان ہونے والے مذاکرات کو ممکن بنانے میں اپنا کردار ادا کیا ہے اور وہ افغان عوام کی آزمائش کے ختم ہونے کے لیے دعاگو ہیں۔

امریکی مذاکراتی ٹیم کے سربراہ زلمے خلیل زاد کی طالبان کے نمائندوں سے ملاقاتوں میں گزشتہ تین ماہ سے تیزی آئی ہے۔

گزشتہ ماہ قطر میں بھی افغان طالبان نے امریکہ کے ساتھ مذاکرات کیے تھے جو بغیر کسی نتیجے کے ختم ہوئے۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز