ادویات بنانے والوں کو قیمت میں ایک مرتبہ پھر اضافے کی اجازت

ادویات کی قیمتوں میں تین سالوں کے دوران تسلسل کے ساتھ اضافہ

فائل فوٹو


اقتصادی رابطہ کمیٹی نے ادویات مہنگی ،روز ویلٹ ہوٹل دوبارہ کھولنے اور وزارت داخلہ کو 45 کروڑ روپے کی تکنیکی ضمنی گرانٹ فراہم کرنے کی منظوری دیدی ۔

سرکاری خبر رساں ادارے اے پی پی کے مطابق وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار کی زیر صدارت کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی کا اجلاس جمعہ کو منعقد ہوا ۔ای سی سی نے روز ویلٹ ہوٹل نیویارک دوبارہ کھولنے کیلئے وزارت ایوی ایشن کی سفارشات کی منظوری دیدی ،ای سی سی نے 1.145 ملین ڈالر کے دستیاب فنڈز روزویلٹ ہوٹل دوبارہ کھولنے کیلئے استعمال کرنے کی بھی اجازت دیدی ہے۔

سات فیصد پاکستانیوں کو مہنگائی کے باوجود کوئی پریشانی نہیں، سروے جاری

وزارت ہوا بازی نے روزویلٹ ہوٹل، نیویارک کو دوبارہ کھولنے کے بارے میں ایک سمری پیش کی اور بتایا کہ پی آئی اے انویسٹمنٹ لمیٹڈ (پی آئی اے-آئی ایل) انتظامیہ کو نیویارک سٹی حکومت کی جانب سے ہوٹل (1,025 کمروں) کو استعمال کرنے کا موقع ملا ہے۔ تارکین وطن کے کاروبار کے لیے تین سال کی مدت میں فی کمرہ فی دن 200 ڈالر ہے۔ ای سی سی نے بحث کے بعد وزارت کی سفارشات کی منظوری دی اور نیویارک سٹی گورنمنٹ اور ہوٹل یونین کے ساتھ مذاکرات کے لیے سیکرٹری ایوی ایشن ڈویژن کی سربراہی میں چار رکنی مذاکراتی کمیٹی کی تشکیل کی منظوری دی۔

مہنگائی نے 89 فیصد پاکستانیوں کا باہر جاکر کھانا کم کروادیا

ای سی سی نے آر ایچ سی/آئی ایل – پی آئی اےکو ہوٹل میں دوبارہ کھولنے کے کام کو شروع کرنے کے لیے پل فنانسنگ کے طور پر دستیاب بیلنس سے 1.145 ملین ڈالر کے فنڈز استعمال کرنے کی بھی اجازت دی۔ وزارت نیشنل ہیلتھ سروسز، ریگولیشنز اینڈ کوآرڈینیشن نے پاکستانی روپے کی قدر میں کمی اور مہنگائی کے تناظر میں ڈریپ کے پالیسی بورڈ کی سفارشات پر مبنی ادویات کی زیادہ سے زیادہ خوردہ قیمتوں میں اضافے کی سمری پیش کی۔ مارکیٹ میں ادویات کی مسلسل دستیابی کو یقینی بنانے کے لیے، ای سی سی نے ایک وقتی ڈسپنسیشن کے طور پر اجازت دی، مینوفیکچررز اور درآمد کنندگان کو ضروری ادویات کی موجودہ ایم آر پیز میں (14 فیصد کی حد کے ساتھ) اور ایم ار پیز میں 70 فیصد اضافے کے برابر بڑھانے کی اجازت دی۔

پاکستان کی تاریخ کا مہنگا ترین رمضان، مہنگائی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی

دیگر تمام ادویات اور کم قیمت والی دوائیں موجودہ سال یعنی یکم جولائی 2022 سے 01 اپریل 2023 کے درمیان اوسط سی پی آ ئیے کی بنیاد پر 70 فیصد تک اضافہ (20 فیصد کی حد کے ساتھ) اس شرط کے ساتھ کہ اسے سالانہ سمجھا جائے۔ مالی سال 2023-24 کے لیے اضافہ اور اگلے مالی سال میں اس زمرے کے تحت کوئی اضافہ نہیں کیا جائے گا۔ ای سی سی نے پالیسی بورڈ کو مزید مشورہ دیا کہ وہ جولائی 2023 میں تین ماہ کے بعد صورتحال کا جائزہ لے اور اگر پاکستانی روپے کی قدر بڑھ جاتی ہے تو قیمتوں میں کمی کے حوالے سے اپنی سفارشات وفاقی حکومت کو دیں۔

حکومت نے مہنگائی میں مزید اضافے کا عندیہ دے دیا

ای سی سی نے کیش کریڈٹ کی حد کے ساتھ گندم کی فصل 2022-23 کے لیے سندھ، پنجاب اور بلوچستان کے صوبوں کے لیے گندم کی خریداری کے اہداف کے تعین سے متعلق وزارت نیشنل فوڈ سکیورٹی اینڈ ریسرچ کی سمری پر غور اور منظوری دی۔ حکومت سندھ نے 1.400 ایم ایم ٹی کی خریداری کا ہدف مقرر کیا ہے جس کی خریداری کی قیمت 4000/40 کلوگرام ہے۔اجلاس میں روپے کی قدر میں کمی کے تناظر ادویات ساز کمپنیوں کو ادویات کی قیمتوں میں ایک مرتبہ کیلئے اضافے اوروزارت داخلہ کو 45کروڑ روپے کی تکنیکی ضمنی گرانٹ فراہم کرنے کی منظوری دی گئی۔

وزیراعظم کا غربا کو مہنگائی سے بچانے کا بڑا فیصلہ

ای سی سی نے گندم کی خریداری کے اہداف کی بھی منظوری دی،سندھ حکومت چارہزار روپے فی چالیس کلوکے حساب سے ایک ہزار چار سو ملین میٹرک ٹن،پنجاب حکومت تین ہزار نو سو روپے فی چالیس کلو گرام کے حساب سے 3500 ملین میٹرک ٹن اوربلوچستان حکومت ایک لاکھ میٹرک ٹن گندم خریدے گی ۔ ای سی سی نے وزارت داخلہ کے حق میں 450 ملین تکنیکی ضمنی گرانٹ کے طور پر آئی سی ٹی پولیس کی ذمہ داریوں اور بھرتی کی تربیت سے متعلق آپریشنل ضروریات کو پورا کرنے کے لیے منظوری دیدی۔


ٹیگز :
متعلقہ خبریں