میری لیڈر مریم نواز نہیں نواز شریف ہیں، شاہد خاقان عباسی

شاہد خاقان عباسی (shahid khaqan abbasi)

اسلام آباد: مسلم لیگ ن کے رہنما اور سابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ میری لیڈر مریم نواز نہیں بلکہ نواز شریف ہیں۔

سابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نے میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ الیکشن کمیشن نے انتخابات کرانے ہیں اور اس کے علاوہ کوئی چوائس نہیں ہے۔ الیکشن میں تاخیر ہوئی تو سپریم کورٹ میں چیلنج ہو گا۔ الیکشن کمیشن کی مدد حکومتی اداروں کی ذمہ داری ہے اور اس حوالے سے آئین واضح ہے تاہم آئین میں غیرمعمولی حالات میں انتخابات ملتوی کرنے کی گنجائش ہے۔

انہوں نے کہا کہ وزارت خزانہ کو پیسے دینا پڑیں گے بیشک قرض لے کر دیں اور اگر گورنر انتخابات کی تاریخ نہ دیں تو الیکشن کمیشن خود تاریخ دے سکتا ہے۔ مسلم لیگ ن لیگ کے لیے الیکشن میں جانا آسان نہیں۔

شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان کا بوجھ قبول کیا اور اب الیکشن میں اس کا سامنا کرنا پڑے گا۔ عوام کے پاس بیانیہ لے کر جائیں گے کہ مشکل فیصلے کیوں کیے۔

انہوں نے کہا کہ مریم نواز جب سے پاکستان آئیں ہیں ان سے ملاقات نہیں ہوئی لیکن مسلم لیگ ن سے کوئی دوری نہیں بڑھی جبکہ نواز شریف اور پارٹی سے رابطہ آج بھی قائم ہے۔ مریم نواز کو فری ہینڈ دینے کے لیے ہی عہدے سے پیچھے ہٹا اور میری لیڈر مریم نواز نہیں بلکہ نواز شریف ہیں تاہم مریم نواز پارٹی صدر بنیں تو فیصلہ کروں گا کہ سیاست کرنی ہے یا نہیں۔

یہ بھی پڑھیں: عمران خان کے سلیکٹرز گھر چلے گئے ہیں،اب ان کی کہانی ختم، مریم نواز

رہنما مسلم لیگ ن نے کہا کہ سینئر پارٹی رہنماؤں کو تنقید عوام میں نہیں بلکہ پارٹی میں کرنی چاہیے اور اختلافِ رائے اختلاف میں بدل جانے سے بدمزگی پیدا ہو جاتی ہے اور بدمزگی پیدا نہ ہو اس لیے میں نے بہتر سمجھا کہ عہدے سے الگ ہو جاؤں۔ چودھری نثار سے 2018 کے بعد کوئی رابطہ نہیں ہے انہیں پارٹی سے کچھ شکایات ہیں لیکن مجھے کوئی شکایت نہیں۔

انہوں نے کہا کہ مریم نواز کو لیڈر شپ پوزیشن ملی اس لیے انہیں کام کرنے کا موقع دینا چاہیے اور مریم نواز چونکہ نواز شریف کی بیٹی ہیں اس ناطے سے میں ان کا چچا لگتا ہوں۔ مسلم لیگ ن سے اپنے گھر جا سکتا ہوں لیکن کہیں اور نہیں۔

ڈالر سے متعلق بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ڈالر کو اس کی اصل قیمت پر رہنے دینا چاہیے اور اگر ڈالر اصل قیمت پر نہ ہو تو اس کے نقصانات زیادہ ہیں۔


متعلقہ خبریں