پی ٹی آئی کے دو سالہ دور میں جمہوریت کے خلاف سازشوں میں تیزی آئی، اسفندیار


پشاور: سربراہ عوامی نیشنل پارٹی اسفند یارولی خان نے کہا ہے کہ پاکستان تحریک انصاف کے دو سالہ دور میں  جمہوریت کے خلاف سازشوں میں تیزی آئی۔

پی ٹی آئی حکومت کے دو سال مکمل ہونے پر ایک بیان رد عمل دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کے دو سالہ دور میں ملکی معیشت بدترین رہی

اسفندیار ولی خان نے کہا کہ ایک کروڑ نوکریاں کہاں ہیں؟ دو سال کے دوران کوئی میگا منصوبہ شروع نہیں کیا گیا۔پارلیمنٹ کو بے توقیر کردیا گیا۔

سربراہ اے این پی اسفندیارولی نے کہا کہ پی ٹی آئی کے دو سالہ دور میں  چینی کی اوسط قیمت فی کلو 40 روپے بڑھ گئی۔ مہنگائی پاکستان کی تاریخ کی بلند ترین سطح پر پہنچ چکی ہے۔

خیال رہے کہ پاکستان تحریک انصاف کی حکومت کو دو سال مکمل ہونے پر کارکردگی رپورٹ جاری کی گئی ہے جس کے مطابق دو سال میں 28 ایکٹس بنے اور 39 آرڈیننس جاری ہوئے۔

مزید پڑھیں: دو سالہ حکومتی کارکردگی پر کابینہ ارکان کا وزیراعظم کو خراج تحسین

رپورٹ کے مطابق وزیراعظم آفس سے کوئی ریڈ لیٹر وزارت کو موصول نہیں ہوا۔ ای آفس نامی سافٹ ویئر تیار ہے لیکن فنڈزکی عدم دستیابی کے باعث کمپیوٹرز دستیاب نہیں۔

گزشتہ دو سال کے دوران وزارت قانون نے وفاقی حکومت سے متعلقہ9ہزار 450 مقدمات کی مختلف عدالتوں میں پیروی کی۔ 814سپریم کورٹ، 6 ہزار 79 ہائیکورٹس اور دیگر کیسز دوسری عدالتوں میں زیر سماعت ہیں۔

انتظامی ٹربیونلز اور خصوصی عدالتوں میں ججز تعینات کیے گئے۔ مختلف وزارتوں اور محکموں کو 600 مختلف امور پر قانونی رائے فراہم کی۔ مختلف اداروں کے رولز کے جائزہ کےلیے 4 ہزار 699 درخواستیں نمٹائی گئیں۔

رپورٹ کے مطابق ڈرافٹنگ ونگ کو پارلیمان سے 345 پرائیوٹ ممبر بل جائزے کےلیے موصول ہوئے۔ ملک بھر میں نئی خصوصی عدالتوں کا قیام عمل میں لایا جا رہا ہے۔ دو سال میں 641 بین الاقوامی معاہدے اور یادداشتوں کا جائزہ لیا گیا جب کہ سپریم کورٹ کراچی رجسٹری کی توسیع کا کام بھی جاری ہے۔


متعلقہ خبریں